• KHI: Zuhr 12:34pm Asr 5:17pm
  • LHR: Zuhr 12:05pm Asr 5:01pm
  • ISB: Zuhr 12:10pm Asr 5:11pm
  • KHI: Zuhr 12:34pm Asr 5:17pm
  • LHR: Zuhr 12:05pm Asr 5:01pm
  • ISB: Zuhr 12:10pm Asr 5:11pm

معروف سینئر اداکار طلعت حسین انتقال کر گئے

شائع May 26, 2024
طلعت حسین—فوٹو: فیس بک
طلعت حسین—فوٹو: فیس بک

ڈراموں، فلموں، ریڈیو اور تھیٹر کے معروف ایوارڈ یافتہ سینئر اداکار طلعت حسین کراچی میں انتقال کر گئے۔

ڈان نیوز کے مطابق اداکار طلعت حسین کراچی کے نجی ہسپتال میں زیر علاج تھے، اداکار پھیپھڑوں کے عارضے میں مبتلا تھے۔

طلعت حسین کے سوگواروں میں 2 بیٹیاں اور ایک بیٹا شامل ہیں۔

اتوار کو بعد نماز عصر طلعت حسین کی نماز جنازہ کراچی کے علاقے ڈیفنس فیز 8 میں ادا کردی گئی۔

نماز جنازہ میں رشتہ داروں کے علاوہ شوبز سے وابستہ شخصیات کی بھی بڑی تعداد شریک ہوئی۔ مرحوم کی تدفین ڈیفنس کے مقامی قبرستان میں کی گئی۔

اظہار تعزیت

قائم مقام صدر یوسف رضا گیلانی نے اتوار کو معروف فنکار طلعت حسین کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے، قائم مقام صدر نے اپنے ایک پیغام میں کہا کہ مرحوم طلعت حسین کی فنون لطیفہ میں انمول خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔

انہوں نے دعا کی کہ اللہ تعالیٰ مرحوم کو جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور سوگوار لواحقین کو یہ صدمہ صبر و استقامت کے ساتھ برداشت کرنے کی ہمت عطا فرمائے۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے اداکار و صدا کار طلعت حسین کی وفات پر گہرے افسوس اور رنج کا اظہار کرتے ہوئے مرحوم اداکار طلعت حسین کی بلندی درجات کے لیے دعا کی۔

وزیراعظم نے طلعت حسین کے لواحقین سے اظہار تعزیت کرتے ہوئے کہا کہ طلعت حسین لیجنڈ ادا کار تھے، ان کی ڈائیلاگ ڈیلیوری کا ایک زمانہ معترف تھا، طلعت حسین نےجاندار اداکاری سے ڈرامہ و فلم شائقین کے دلوں میں جگہ بنائی، طلعت حسین کی وفات سے جو خلا پیدا ہوا اسے کبھی پر نہیں کیا جاسکے گا، ٹی وی، تھیٹر، فلم، ریڈیو کے لیے طلعت حسین کی خدمات ہمیشہ یاد رکھی جائیں گی۔

وفاقی وزیر داخلہ محسن نقوی نے معروف اداکار طلعت حسین کے انتقال پر دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ طلعت حسین ورسٹائل فنکار تھے، طلعت حسین کے یادگار ڈرامے پرستار آج بھی نہیں بھولے، طلعت حسین کے انتقال سے اداکاری کا خوبصورت دور ختم ہوا ہے۔

وزیراعلیٰ پنجاب مریم نواز نے نامور اداکار طلعت حسین کے انتقال پر افسوس کرتے ہوئے طلعت حسین کے اہلخانہ سے تعزیت و ہمدردی کا اظہار کیا اور طلعت حسین کی فنی خدمات کو خراج تحسین پیش کیا۔

واضح رہے کہ 3 فروری کو سینیئر اداکار طلعت حسین کی صاحبزادی اداکارہ تزئین حسین نے بتایا تھا کہ ان کے والد کی طبیعت بہتر ہونے لگی اور اب ان کے والد پہلے سے بہتری محسوس کر رہے ہیں۔

30 جنوری کو اداکار فیصل قریشی اور ان کی اہلیہ ثنا قریشی نے تصدیق کی تھی کہ سینئر اداکار طلعت حسین ڈیمینشیا کا شکار ہیں۔

26 جنوری کو اداکار طلعت حسین زائد العمری سمیت دیگر پیچیدگیوں کے باعث شدید علیل ہوگئے اور اہل خانہ نے بتایا تھا کہ ان کی ذہنی حالت بھی انتہائی بگڑ چکی ہے۔

طلعت حسین 1940میں بھارت کے شہر دہلی میں پیدا ہوئے، طلعت حسین کی عمر 80 سال سے زائد تھی اور انہوں نے فنون لطیفہ کو نصف صدی دی ہے، یعنی انہوں نے اپنی عمر کا بیشتر حصہ اداکاری، صداکاری، آرٹ اور فن کو دی۔

طلعت حسین نے 1970 سے قبل کم عمری میں ہی اداکاری شروع کردی تھی لیکن انہیں 1970 کے بعد شہرت ملنا شروع ہوئی۔

اداکاری میں قدم رکھنے کے چند سال بعد ہی طلعت حسین اداکاری کی اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے لندن چلے گئے اور وہاں بھی انہوں نے اسٹیج و تھیٹر پر کام کرنے سمیت نشریاتی اداروں کے ساتھ بھی کام کیا۔

لندن سے واپسی کے بعد انہوں نے ایک بار پھر اداکاری کا آغاز کیا اور انہوں نے گزشتہ 5 دہائیوں میں پی ٹی وی کے درجنوں ڈراموں میں شاندار کردار ادا کیے۔

طلعت حسین نے کچھ فلموں میں بھی کام کیا جب کہ انہوں نے اسٹیج تھیٹرز میں بھی جوہر دکھائے اور کئی منصوبوں میں وائس اوور بھی کی، طلعت حسین کےمقبول ڈراموں میں ہوائیں، کشکول، طارق بن زیاد اور دیگر شامل ہیں۔

انہوں اسٹیج پر صلاحیتوں کا مظاہر کیا اور نے فن صداکاری میں بھی اپنی اپنی آواز کا جادو جگایا، حکومت پاکستان کی طرف سے 1982 میں طلعت حسین کو پرائیڈ آف پرفارمنس ایوارڈ اور سال 2021 میں ستارہ امتیاز سے نوازا گیا۔

طلعت حسین طویل العمری سمیت دیگر طبی پیچیدگیوں کے باعث کچھ سالوں سے اسکرین سے دور رہوگئے تھے ۔

کارٹون

کارٹون : 23 جون 2024
کارٹون : 22 جون 2024